Login or Register to make a submission.

Submission Preparation Checklist

As part of the submission process, authors are required to check off their submission's compliance with all of the following items, and submissions may be returned to authors that do not adhere to these guidelines.
  • The submission has not been previously published, nor is it before another journal for consideration (or an explanation has been provided in Comments to the Editor).
  • The submission file is in OpenOffice, Microsoft Word, or RTF document file format.
  • Where available, URLs for the references have been provided.
  • The text is single-spaced; uses a 12-point font; employs italics, rather than underlining (except with URL addresses); and all illustrations, figures, and tables are placed within the text at the appropriate points, rather than at the end.
  • The text adheres to the stylistic and bibliographic requirements outlined in the Author Guidelines.

Author Guidelines

مقالہ نگاروں سے چند گزارشات

 

  • التفسیر میں علوم قرآن وحدیث،فقہ،کلام،تصوف،اسلامی،تہذیب و تمدن،تقابل ادیان،فلسفہ اور سائنس، ادبیات،معاشیات، عمرانیات، سماجیات اورسیاسیات جیسے موضوعات پراردو اورانگریزی میں علمی اورتحقیقی غیر مطبوعہ مقالات شائع کیے جاتے ہیں۔
  • تراجم وتفاسیر قرآن اورعلوم قرآن سے متعلق مقالات قابل ترجیح ہیں۔
  • تمام مقالات A-4سائز کے کاغذ پرایک جانب ایم۔ایس۔ ورڈ میں کمپوز کرواکربھیجے جائیں۔حروف کی جسامت13 پوائنٹ سائز ہو۔ مقالے کے ساتھ انگریزی زبان میں اس کاخلاصہ ضرور شامل کیا جائے جو150۔200 الفاظ پر مبنی ہو۔ نیز مقالے میں درج اہم بنیادی الفاظ (Key Words) کی نشان دہی ضرور کی جائے۔
  • انگریزی ملخص کے ساتھ مقالے کے عنوان کا انگریزی ترجمہ، مقالہ نگار کے نام کے انگریزی ہجے، موجودہ عہدہ نیز مکمل پتا اور رابطہ نمبر بھی درج کیاجائے۔
  • اردو عبارت نوری نستعلیق میں اور عربی عبارت القلم قرآن مجید یا ٹریڈ عربک بولڈ میں کمپوز کی جائے۔
  • انگریزی مقالے میں شامل غیر انگریزی الفاظ کی نقل حرفی (Transliteration) کے لیے التفسیر کے جدول کو مد نظر رکھا جائے۔ اسی طرح اردو مقالے کے انگریزی خلاصے میں شامل غیر انگریزی الفاظ کی نقل حرفی کے لیے بھی مذکورہ جدول کو کو مد نظر رکھا جائے۔
  • مقالے کی سوفٹ کاپی کے ساتھ دوہارڈ کاپی بھی ارسال کی جائیں۔
  • التفسیر میں کسی مقالے کی اشاعت کے لیے ادارے کی جانب سے نام زد ماہرین کی تائید ضروری ہے۔اس سلسلے میں ادارہ ناقابل اشاعت تحریروں کی مقالہ نگاروں کو واپسی کی ذمے داری قبول نہیں کرتا۔
  • ایک مقالہ ایک یادومقالہ نگاروں کے نام سے شائع ہوگا،دو سے زائد مقالہ نگاروں کے نام قبول نہیں کیے جائیں گے۔
  • ادارہ، اشاعت کے لیے قبول کیے جانے والے مقالات میں ترمیم،تنسیخ اورتلخیص کاحق محفوظ رکھتاہے۔
  • مقالے کی اشاعت کی صورت میں مقالہ نگاروں کو مجلّے کے دو اعزازی نسخے پیش کیے جائیں گے۔
  • مقالے میں استعمال ہونے والے تمام حوالہ جات / حواشی کا شمار ایک ہی ہو۔ نئے صفحے سےحوالوں کےنئے اعداد نہیں لکھے جائیں اور تمام حوالہ جات / حواشی مقالے کے آخر میں درج کیے جائیں ۔
  • مقالے میں حوالہ جات کو درج کرتے وقت التفسیر کے درج ذیل طرز (Format) کو اختیار کیا جائے:

قرآن کا حوالہ                  سورہ بقرہ: 36

حدیث کا حوالہ                بخاری، محمد بن اسماعیل، الجامع الصحیح، حدیث: 109

کتاب کا حوالہ                  اوج، ڈاکٹر محمد شکیل، نسائیات، 2012ء، کراچی: کلیہ معارف اسلامیہ، جامعہ کراچی، ص 51

مقالے میں ایک کتاب کے دوبارہ حوالے کے لیے صرف مصنف کا مشہور نام (عموماً نام کا آخری جز) اور کتاب کا مختصر نام لکھا جائے۔ مثلاً: اوج، نسائیات، ص 28

مدون کتاب کا حوالہ            برنی، ضیاء الدین، "تاریخ فیروز شاہی"، بہ تصحیح و مقدمہ سرسید احمد خان،2005ء، علی گڑھ:

                                          سرسید اکیڈمی،  ص61

مجلے کا حوالہ                    اوج، ڈاکٹر محمدشکیل،  "نکاح و طلاق میں زوجین کے  حقوق کا تعین"، مشمولہ: ماہنامہ معارف، اعظم گڑھ (انڈیا)، دسمبر 2010ء، ص  432

      ترجمے کا حوالہ                       سباعی، شیخ مصطفیٰ حسنی، سنت رسولﷺ، مترجم: ملک غلام علی، 2018ء، کراچی: قرطاس ،

 ص22

آن لائن دستاویز کا حوالہ         http://www.academia.edu/Documents/in/Quranic_sciences

(مورخہ:  4/ اپریل 2018ء)

  • املا کے لیے رائج اصولوں کو مدِّ نظر رکھا جائے۔ ذیل میں ایسےکچھ الفاظ کا درست املا دیا جارہا ہے جو عام طور پر غلط لکھے جاتے ہیں:

          درست املا                              غلط املا                                درست املا                              غلط املا

            لیے                                             لئے                                             دیے                                            دیئے

            کیے                                             کئے                                             کیجیے                                             کیجئے

            دیجیے                                           دیجئے                                            چاہیے                                           چاہ

لیکن یہ خیال رہے کہ اگر ہمزہ سے پہلے والا حرف الف (ا) ہوگا تو ہمزہ کا استعمال درست ہے۔  مثلا: آئیے، جائیے، فرمائیے، کھائیے  وغیرہ  میں

  • اسی طرح اگر ہمزہ سے پہلے والا حرف واو (و) ہوگا تو بھی ہمزہ لکھنا ضروری ہے (تاکہ تلفظ درست ادا ہوسکے)  مثلاً: رویئے، دھوئیے، کھوئیے، سوئیے وغیرہ  میں
  • درج ذیل الفاظ کو دو چشمی ھ کے ساتھ لکھنا چاہیے:

درست املا           غلط املا                       درست املا                   غلط املا

تمھارا                                  تمہارا                                 تمھاری                  تمہاری

تمھارے                  تمہارے                تمھیں                              تمہیں 

انھیں                                  انہیں                                جنھیں                              جنہیں

  • کچھ الفاظ کو بعض لوگ غیر ضروری طور پر ملا کرلکھتے ہیں جو درست نہیں کیوں کہ اس طرح الجھن ہوتی ہے مثلاً: "اس کو" لکھنا چاہیے بجائے  "اسکو"، اسی طرح انکو، انکا، انکے، کیخلاف ، ہوجائیگا، ملکر وغیرہ کو بھی ملا کر لکھنا مناسب نہیں ہے۔ ان الفاظ کو علی الترتیب اس طرح لکھنا چاہیے: ان کو ، ان کا، ان کے، کے خلاف ، ہو جائے گا، مل کر۔
  • جو لفظ امالہ قبول کرتے ہیں ان کو امالے کے ساتھ لکھا جائے، بشرط یہ کہ عبارت میں اس کا محل ہو۔ مثلاً: مسئلے بجائے مسئلہ، موقعے بجائے موقع، طریقے بجائے طریقہ وغیرہ ۔

 

نوٹ:التفسیر میں اشاعت کے لیے جملہ نگارشات کی ترسیل/ادارتی خط وکتابت مندرجہ ذیل پتے پر کی جائے:

ڈاکٹر حافظ محمد سہیل شفیق،شعبہ اسلامی تاریخ، جامعہ کراچی،کراچی۔

E-mail: msshafiq@uok.edu.pk

drhassanauj@hotmail.com

Privacy Statement

The names and email addresses entered in this journal site will be used exclusively for the stated purposes of this journal and will not be made available for any other purpose or to any other party.